کتنے مجبور ہیں ہم پیار کے ھاتھوں

<<<<<ََہمیشہ ہی نہیں رہتے کبھی چہرے نقابوں میں
سبھی کردار کھلتے ہیں کہانی ختم ہونے پر

<<<<<تجھ سے ہے منسلک میری زندگی کا ہر پہلو
خود کو کبھی سمجھنا مت جدا مجھ سے

<<<<<کرتا نہیں ہے تم سے شکایت یہ دل مگر
کہنا یہ چاہتا ہے کہ تم اب وہ نہیں رہے

<<<<<تیرے سلوک سے کوئی شکایت نہیں خدا کی قسم
میرے خلوص میں ہی شاید کوئی کمی ہوگی….!

<<<<<تنہا زندگی تو سبھی جی لیتے ہیں
مل کر جینا کسی کسی کو آتا ہے
اک پل کاپیار تو سبھی کر لیتے ہیں
زندگی بھر کا پیار نبھانا کسی کسی کو آتا ہے

<<<<<کتنے مجبور ہیں ہم پیار کے ھاتھوں
نہ تجھے پانے کی اوقات نہ تجھے بھول جانے کا حوصلہ