اس کشمکشِ ہستی میں کوئی راحت نہ ملی جو غم نہ ہوئی(فانی بدایونی)

اس کشمکشِ ہستی میں کوئی راحت نہ ملی جو غم نہ ہوئی اس کشمکشِ ہستی میں کوئی راحت نہ ملی جو غم نہ ہوئی تدبیر کا حاصل کیا کہیئے تقدیر کی گردش کم نہ ہوئی اللہ رے سکونِ قلب اس مزید پڑھیں